او جی ڈی سی ایل میں سیاسی بھرتیوں کا انکشاف حکمرا ن جماعت کے 800 کارکنوں کو ورک چارج دے دیا گیا

او جی ڈی سی ایل

اسلام آباد (آن لائن) وزیر اعظم کے حکم پر 800 کارکنوں کو او جی ڈی سی ایل میں ورک چارج دیئے جانے کا انکشاف ہوا ہے اس حوالے سے وفاقی تحقیقاتی ادارے ایف آئی اے نے تحقیقات شروع کر دی ہے اور وزیر اعظم کے باورچی کرا مت علی کو گرفتار کر لیا گیا ہے ۔ معتبر ذرائع کے مطابق سیاسی بنیادوں پر آئل اینڈ گیس ڈویلپمنٹ لمٹیڈ ( او جی ڈی سی ایل ) میں 800 حکمران جماعت کے کارکنوں کو ورک چارج جاری کرنے کا انکشاف ہوا ہے جن کو بعدازاں مستقل کر دیا جائے گا اس حواے سے ذرائع کا مزید کہنا تھا کہ مذکورہ بالا 800 افراد کو ایم این اے ‘ ایم پی ایز سے سفارش پر بھاری نظرانے لے کر بھرتی کیا گیا ہے جو ادارے پر اضافی بوجھ کے مترادف ہے کیونکہ اس سے قبل بھی پاکستان پیپلزپارٹی کے دور میں بھرتی کئے جانے والے سینکڑوں ملازمین مستقلی کے منتظر ہے اس حوالے سے ذرائع کا مزید کہنا تھا کہ 800 افراد کو ورک چارج جاری کئے جانے میں وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی جن کے پاس وزارت پٹرولیم کا بھی اضافی چارج بھی ہے کا عملہ ملوث ہے اور اس سے فی کس ملازم سے مبینہ طور پر 5 لاکھ روپے وصول کئے گئے ہیں اور اس حوالے سے ایف آئی اے نے نوکری کا جھانسہ دے کر شہریوں سے لاکھوں روپے بٹورنے کے الزامات پر وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی کے باورچی کرامت علی کو بھی تحویل میں لے کر تحقیقات شروع کر دی گئی ہے او جی ڈی سی ایل میں خلاف ضابطہ اور سیاسی بنیادوں پر بھرتیوں کے حوالے سے آن لائن کے استفسار پر ترجمان او جی ڈی سی ایل احمد حیات لک نے بتایا کہ 800 افراد کو ورک چارج جاری کرنے کا علم نہیں نہ ہی اس حوالے سے تفصیلات کے پاس ہے چیک کر بتایا جا سکتا ہے ۔

Scroll To Top