پاکستان کے خلاف حکومتِ پاکستان کا اعلانِ جنگ

aaj-ki-bat-logo


اعلیٰ ترین سطح پر دروغ بیانی کے جرم کا ارتکاب کرنے کی پاداش میں وزارت عظمیٰ سے سبکدوش کئے جانے اور نہایت سنگین الزامات کے تحت مقدمات کا سامنا کرنے والے ایک شخص نے پاکستان کے خلاف اعلانِ جنگ کررکھا ہے۔ اس شخص کا نام میاں نوازشریف ہے۔۔۔
یہ اعلانِ جنگ حکومتِ پاکستان کے خلاف اس لئے نہیں کہ پاکستان پر اب بھی اسی شخص کی حکومت قائم ہے۔ کوئی بھی صحیح الدماغ شخص اپنی حکومت کے خلاف اعلانِ جنگ نہیں کرسکتا۔ چنانچہ گزشتہ شب جو بیان لندن سے روانگی سے قبل میا ں نوازشریف نے دیا ہے اسے حکومتِ پاکستان کے خلاف نہیں ریاستِ پاکستان کے خلاف اعلانِ جنگ سمجھا جانا چاہئے۔۔۔
اِ س بات کا مطلب یہ ہے کہ تاریخ میں شاید یہ پہلا موقع آیا ہے کہ حکومت اور ریاست ایک دوسرے کے خلاف محاذ آراءہیں۔ حکومت `پاکستان میں شریف خاندان کی ہے جس کے سربراہ میاں نوازشریف ہیں۔ جہاں تک مسلم لیگ (ن)کا تعلق ہے اس کی حیثیت ایک پرائیویٹ لمیٹڈ کمپنی کے طور پر چلائی جانے والی سیاسی جماعت سے زیادہ نہیں۔ پاکستان پر حکومت کرنے والی اِس پرائیویٹ لمیٹڈ کمپنی کے چیف ایگزیکٹو میاں نوازشریف ہی ہیں ۔ البتہ ” سی او او “ یعنی چیف آپریٹنگ آفیسر کے فرائض شاہد خاقان عباسی انجام دے رہے ہیں۔ حکومت کے وزراءکی حیثیت چیف ایگزیکٹو کے مقرر کردہ ڈائریکٹرز کی ہے جنہیں برطرف کرنے کا اختیار بھی چیف ایگزیکٹوکے پاس ہی ہے۔۔۔
گزشتہ شب جو بیان میاں نوازشریف نے لندن میں دیا وہ اپنی نوعیت کا پہلا بیان نہیں تھا۔ اِس سے پہلے وہ اس سے بھی زیادہ خوفناک بیانات ریاستِ پاکستان اور اس کے اداروں کے خلاف دے چکے ہیں۔ گزشتہ شب انہوں نے کہا کہ پاکستان میں احتساب کے نام پر ان سے سیاسی انتقام لیا جارہا ہے اور ان کے خلاف قائم ہونے والے تمام مقدمات جھوٹے ہیں۔ انہوں نے یہ نہیں بتایا کہ حکومت تو خود اُن کی اپنی ہے پھر اُن سے سیاسی انتقام کون لے رہا ہے۔ ؟ ظاہر ہے کہ وہ ریاستِ پاکستان پر ہی الزام لگا رہے ہیں۔ ۔۔
لندن سے اسلام آباد پہنچنے پر ان کا استقبال حکومت نے جس شاہانہ انداز میں کیا ہے اس کی نظیر ملک کی تاریخ میں نہیں ملتی۔مجھے یوں لگا کہ جیسے حکومت پاکستان للکار للکار کر ریاستِ پاکستان سے کہہ رہی ہو کہ اگر ہمت ہے تو مقابلے پر آﺅ۔۔۔
گزشتہ شب جب میاں نوازشریف پاکستان پر سنگین الزامات لگا رہے تھے تو مجھے کافی ماہ قبل کا وہ بیان یاد آیا جو صدرمملکت ممنون حسین نے دیا تھا۔۔۔
” جو شخص جس قدر بڑا مجرم ہوگا اس کے چہرے پر اسی قدر زیادہ نحوست نظر آئے گی ۔۔“
اگر میں یہ کہوں تو غلط نہیں ہوگا کہ پاکستان پر اس وقت نحوست حملہ آور ہے۔ پاکستان کا دفاع کون کرے گا اس کے بارے میں فی الحال میں کچھ نہیں کہہ سکتا۔ مگر یہ بات روزِ روشن کی طرح عیاں ہے کہ قائداعظم ؒ کا پاکستان زیادہ عرصے تک اس خوفناک مافیا کے شکنجے میں نہیں رہ سکتا۔۔۔
میاں نوازشریف بار بار یہی فرما رہے ہیں کہ ان کے خلاف تمام مقدمات جھوٹے ہیں مگر وہ اِن مقدمات کو عدالت میں جھوٹا ثابت کرنے کے لئے تیار نہیں۔ وہ قوم پر یہ راز آشکار کرنے پر آمادہ نہیں کہ اگر تمام ہی مقدمات جھوٹے ہیں تو ان کے پاس بے انداز دولت کہاں سے آئی۔۔۔

Scroll To Top