میاں صاحب ہیلن کا بوسہ آپ لے چکے اب آپ کو شیطان زادے کے ساتھ معاہدے کی قیمت چکانی ہوگی۔۔۔

aaj-ki-bat-logoاللہ تعالیٰ جب کسی شخص پر گمراہی کے دروازے کھولتا ہے اور جہنم کو اس کی عاقبت بنا دیتا ہے تو وہ شخص اچھائی اور برائی کی تمیز کھو دیتا ہے اور وہ اپنے آپ پر سچ کے دروازے خود ہی بند کر ڈالتا ہے۔۔۔

میں نہیں جانتا کہ میاں نوازشریف ہنوز گمراہی کے اس مقام تک پہنچے ہیں یا نہیں لیکن ان کی چال ڈھال اور بول چال میں متکبرانہ خود پسندی اس حد تک رچی بسی نظر آتی ہے کہ ان پر ترس آئے بغیر نہیں رہتا۔۔۔ مجھے ان میں ڈاکٹر فاسٹس کا کردار نظر آتاہے جس نے اپنی روح میفسٹوفلیس (ایک شیطان زادہ)کے کنٹرول میں دے دی تھی ۔۔۔ صرف اس وعدے پر کہ شیطان زادہ اسے ہیلن آف ٹرائے کا نظارہ کرائے گا اور وہ سپارٹا کی حسین ملکہ کا بوسہ لے سکے گا۔۔۔
میاں نوازشریف کی ” ہیلن“ وہ دولت ہے جو انہیں اقتدار کے بغیر حاصل نہیں ہوسکتی تھی۔۔۔ عرفان صدیقی کو میرا مشورہ ہے کہ میاں صاحب کو کرسٹفرمارلو کی تصنیف ” ڈاکٹر فاسٹس“ یا گوئٹے کا شاہکار ” فاﺅسٹ“ ضرور پڑھائیں (ممکن ہے کہ میاں صاحب خود نہ پڑھ سکیں اس لئے عرفان صدیقی کو پڑھ کر سنانا ہوگا اور ساتھ ساتھ مطلب بھی بیان کرنا ہوگا)۔۔۔
میاں صاحب اقتدار اور دولت کو لازم و ملزوم سمجھتے ہیں ۔۔۔ وہ جانتے ہیں کہ اقتدار گیا تو دولت بھی چلی جائے گی۔۔۔
چنانچہ اقتدار کو بچانے کے لئے وہ آخری حد تک جائیں گے ۔۔۔ اور ان کی آخری حد پاکستان کو تباہی کے دہانے پر لے جاکھڑا کرسکتی ہے۔۔۔
میا ں صاحب فوج پر تابڑتوڑ حملے کررہے ہیں۔۔۔ عدلیہ کو بات بات پر للکار رہے ہیں اگرچہ وزارت عظمیٰ اُن کے پاس نہیں رہی لیکن مسلم لیگ (ن)اُن کے پاس ہے۔۔۔ انہیں امریکہ اور بھارت کی درپردہ حمایت بھی حاصل ہے۔۔۔
اور جھوٹ وہ پوری ” ثابت قدمی“ کے ساتھ بول رہے ہیں۔۔۔
ان کا پسندیدہ بیانیہ یہ ہے کہ حلقہ این اے 120کے تین لاکھ بیس ہزار ووٹروں میں سے ساٹھ ہزار کے لگ بھگ ووٹروں نے اپنا ووٹ دے کر انہیں 21کروڑ عوام کے مینڈیٹ کا امین بنا دیا ہے۔۔۔
وہ اس حقیقت سے پوری ڈھٹائی کے ساتھ نظریں چُرا رہے ہیں کہ ان کے اپنے گھر میں اسی فیصد کے لگ بھگ ووٹروں نے مسترد کردیا ہے۔۔۔ اور باقی بیس فیصد کے لگ بھگ جو مینڈیٹ انہیں ملا ہے اس کے لئے پوری حکومتی مشینری نے اپنے تمام وسائل استعمال کئے ہیں۔۔۔حتیٰ کہ بیگم کلثوم نواز کے لئے ہمدردی کا عنصر بھی اس میں شامل ہے۔۔۔
میاں صاحب ہیلن کا بوسہ آپ لے چکے اب آپ کو شیطان زادے کے ساتھ معاہدے کی قیمت چکانی ہوگی۔۔۔
جو لوگ یہ بھول جاتے ہیں کہ اصل حاکم اللہ کی ذات ہے ان کا انجام دہی ہوتا ہے جو شاہ ایران کا ہوا۔۔۔

Scroll To Top