دبئی میں اڑن ٹیکسی کا پہلا کامیاب تجربہ

اڑن ٹیکسی پر 18 روٹر (پنکھڑیاں) لگی ہیں۔ فوٹو: رائٹرز

اڑن ٹیکسی پر 18 روٹر (پنکھڑیاں) لگی ہیں۔ فوٹو: رائٹرز

دبئی: دبئی نے روبوٹ پولیس اہلکاروں کے بعد اب ازخود پرواز کرنے والی ڈرون ٹیکسی کا کامیاب تجربہ کیا ہے جسے دنیا کی پہلی ڈرون ٹیکسی بھی کہا جارہا ہے۔

دو سیٹوں اور 18 پنکھڑیوں والی اس ڈرون ٹیکسی کو جرمن کمپنی وولوکوپٹر نے تیار کیا ہے اور پہلی پرواز کے دوران اس میں کوئی سوار موجود نہ تھا۔ ڈرون ٹیکسی کو پرواز کے دوران ہر لحاظ سے محفوظ بنایا گیا ہے۔ یہ فی الحال 30 منٹ تک پرواز کرسکتی ہے۔ خرابی کی صورت میں اس میں بیک اپ بیٹری، روٹر اور بہت ہی زیادہ خطرے کے صورت میں دو پیراشوٹ بھی موجود ہیں۔

وولوکوپٹر کمپنی کو اس وقت امریکا اور برطانیہ کی درجن بھر کمپنیوں سے شدید مسابقت کا سامنا ہے جو محفوظ اڑن ٹیکسیوں پر کام کررہی ہیں۔ اس ڈرون ٹیکسی کےلیے کسی رن وے کی ضرورت نہیں ہوتی اور یہ ہیلی کاپٹر کی طرح عمودی اڑتی ہیں اور عمودی طور پر ہی لینڈ کرتی ہے۔

وولوکوپٹر کمپنی کے شریک سربراہ الیگزینڈر زوسل نے بتایا کہ وہ عوام کے مفاد کےلیے اڑن ڈرون پر کام کررہے ہیں اور وہ اپنا وژن پیش کرنے کے بجائے حقیقی حل پیش کرتے ہیں۔

دبئی میں اس ڈرون ہیلی کاپٹر کی آزمائش کے موقع پر شیخ ہمدان بن محمد بھی موجود تھے۔

Scroll To Top