چوتھے نظام کی تلاش 28-1-2012

kal-ki-baatمطلق العنان موروثی بادشاہت کے بعد آمرانہ ری پبلکنزم نے جنم لیا۔ اور اس کے بعد جمہوریت کے نام پر منتخب امراءشاہی سامنے آگئی۔ یہ پورا عمل گزشتہ تین صدیوں کی تاریخ پر محیط ہے۔ آج مطلق العنان موروثی بادشاہت صرف عرب دنیا میں نظر آتی ہے' اور یہ صورتحال اس لئے بے حد تکلیف دہ اور ستم ظریف ہے کہ اسلام کا ظہور عرب دنیا سے ہوا تھا ' اور مسلمانوں نے ہی قیصرو کسریٰ کی بادشاہتوں کا خاتمہ کرکے قادر ِمطلق کی حاکمیت کا تصور دنیا کو دیا تھا۔ عرب دنیا سے باہر جو بادشاہتیں ہیں ان کی حیثیت رسمی اور علامتی ہے ۔حقیقی اختیارات وہاں پارلیمنٹ کو حاصل ہیں۔ جہاں تک آمرانہ ری پبلکنزم کا تعلق ہے اسے ہم فوجی آمریت یا فوج کی حمایت سے قائم ہونے والی آمریت کا نام بھی دے سکتے ہیں۔ یہ نظام بھی زیادہ تر مسلم دنیا میں ہی نافذ رہا ہے۔ لیکن اگر یہ کہا جائے کہ ” سلطانیءجمہور “ کے تصور کے فروغ پانے کی وجہ سے شخصی مطلق العنانی بڑی تیزی کے ساتھ دم توڑتی نظر آرہی ہے تو درست ہوگا۔
ستم ظریفی کی بات یہاں یہ ہے کہ ” سلطانی ءجمہور “ یا جمہوریت کے نام پر بھی ” حکومتی اختیارات “ پر قبضہ امراءاور روساءکا ہے۔ اگر یہ کہاجائے تو غلط نہیں ہوگا کہ پارلیمانی جمہوریت دراصل منتخب امراءکی حاکمیت یعنی امراءشاہی کا دوسرانام ہے۔
اگر جمہوریت کے حقیقی تصور کے قریب کچھ حکومتیں نظر آتی ہیں تو یہ وہ ہیں جن میں چیف ایگزیکٹو کا انتخاب عوام براہ راست خود اپنے ووٹوں سے کرتے ہیں۔ ایسی حکومتوں میںبھی عوامی اعتماد کا حامل ” حاکم “ پارلیمنٹ پر قابض امراءکے مخصوص مفادات کے ہاتھوں یرغمال بنا رہتاہے۔ یہی وجہ ہے کہ امریکہ اور فرانس میں بھی روایتی جمہوریت کے بارے میں زبردست شکوک و شہبات پیدا ہونے شروع ہوگئے ہیں ۔حالانکہ یہی دو ممالک ہیں جنہیں جمہوری نظامِ حکومت کی ”جائے پیدائش “اور ” پرورش گاہ “ کہا جاسکتا ہے۔
پھر سوال یہ پیداہوتا ہے کہ آخر کیسا نظامِ حکومت کسی ملک اور اس کے عوام کی تقدیر تبدیل کرنے کی ضمانت بن سکتا ہے ۔؟
اس سوال کا جواب تلاش کرنے کے لئے ہمیں گزشتہ نصف صدی کی تاریخ پر نظر دوڑانی ہوگی۔ جو ممالک ترقی کے روشن مینار بن کرسامنے آئے ہیں ان میں چین بلاشبہ نمایاں امتیاز رکھتا ہے۔ دوسرے نام اس ضمن میں ملائیشیا ¾ سنگاپور اور کوریا ہیں۔ ان ممالک میں جو معجزے رونما ہوئے ان کے پیچھے کیا تھا ؟ اس سوال کا صحیح جواب ہی پاکستان کے عوام کی رہنمائی کرسکتا ہے۔۔۔۔

Scroll To Top