حکمران خاندان میں نفاق کھل کر سامنے آگیا] شہباز شریف نے تمام عہدیداران کو قومی اداروں کیخلاف بیان بیازی سے روک دیا

  • ملک اداروں کے تصادم کامتحمل نہیں ہوسکتا، ایسی بیان بازی نہ کریں جس سے قومی اداروں کے احترام پر آنچ آنے کا اندیشہ ہو‘ وزیر اعلیٰ پنجاب
  • شہباز شریف کا نوازمزاحمتی پالیسی سے مکمل اختلاف، اے120میں ذمہ داریاں حمزہ شہباز سے واپس لے لیں گئیں، حمزہ شہباز کو سیکورٹی خدشات ہیں‘ راناثنا اللہ کی تصدیق

shehbaz-sharif

لاہور (ایجنسیاں/سٹاف رپورٹر)وزیراعلیٰ پنجاب محمد شہباز شریف نے پارٹی کے تمام راہنماﺅں اور عہدےداروں سے اپیل کی ہے کہ وہ ایسی بیان بازی سے احتراز کریں جس سے قومی اداروں کے احترام پر بالواسطہ یا بلاواسطہ آنچ آنے کا اندیشہ ہو۔وزیراعلیٰ پنجاب نے کہاکہ پاکستان اداروں کے درمیان تصادم کا متحمل نہیں ہوسکتا۔انہوں نے مزید کہاکہ میں مسلم لیگ(ن) کے تمام بہی خواہوں سے بھی یہ کہنا ضروری سمجھتا ہوں کہ وہ کسی بھی ایسی خیال آرائی سے گریز کریں جو قومی اداروں کے وقار اورا حترام کے منافی ہو۔ وزیراعلی پنجاب شہباز شریف نے کہا ہے کہ ملک اداروں کے درمیان تصادم کامتحمل نہیں ہوسکتا،پارٹی رہنماوں اورعہدیداروں سے اپیل ہے کہ وہ ایسی بیان بازی سے گریزکریں جس سے اداروں کے احترام پرآنچ آئے۔ہفتہ کو لاہور سے جاری بیان میں وزیراعلیٰ شہبازشریف نے کہا ہے کہ پاکستان اداروں کے درمیان تصادم کا متحمل نہیں ہوسکتا،پارٹی رہنماوں سے اپیل ہے کہ وہ ایسی بیان بازی سے گریزکریں جس سے اداروں کے احترام پرآنچ آئے۔شہباز شریف کی میاں نواز شریف کے اداروں کے خلاف مزاحمتی پالیسی سے مکمل اختلاف سامنے آنے پر حمزہ شہباز سے اے این 120کی ذمہداریاں واپس لے لیں گئیں۔ حمزہ شہبازصوبائی وزیر قانو ن رانا ثنااللہ خان نے کہا ہے کہ حمزہ شہباز کے لئے بھی وزیر اعلیٰ شہباز شریف اور دوسری سینئر قیادت جتنے سکیورٹی خدشات ہیں، پنجاب میں جتنے بھی ضمنی انتخابات ہوئے ہیں حمزہ شہباز نے قیادت کے طور پر آخری جلسہ کیا ہے، اجلاس میں حمزہ شہباز نے خود این اے 120کی انتخابی مہم کے انچارج کے لئے پرویز ملک کے نام دیا ۔گفتگو کرتے ہوئے رانا ثنا اللہ خان نے کہا کہ حمزہ شہباز شریف سکیورٹی خدشات کے باعث روزانہ کی بنیاد پر کسی حلقے میں نہیں جا سکتے اور اب تک پنجاب میں جتنے بھی ضمنی انتخابات ہوئے ہیں حمزہ شہباز نے قیادت کے طور پر آخری جلسے سے خطاب کیا ہے تاہم وہ سارے معالات کو دیکھتے ہیں ۔علاوہ ازیں مسلم لیگ (ن) کے ترجمان کے مطابق پاکستان مسلم لیگ (ن) میں اختلافات مخالفین کی خواہش ہوسکتی ہے جو کبھی پوری نہیں ہوگی ۔ انہوںنے کہا کہ (ن) لیگ لاہور کا صدر ہونے کی وجہ سے پرویز ملک کو انچارج مقرر کیا گیا ہے جبکہ مریم نواز اور حمزہ شہباز ان کے شانہ بشانہ کام کریں گے ۔

Scroll To Top