ہمیں روایتِ صدیق ؓ زندہ کرنی ہوگی کذابوں پر لشکر کشی وقت کی اہم ترین ضرورت ہے ۔۔۔

aaj-ki-baat-new-21-aprilجھوٹ کو اللہ تعالیٰ نے ہر فتنے کی ماں قرار دیا ہے۔۔۔ آپ نے ایک شخص مسلیمہ کذاب کا نام سنا ہوگا۔۔۔ اس کا حقیقی نام مسلیمہ تھا مگر کذاب کے طور پر وہ اس لئے پکارا جاتا ہے کہ جھوٹا تھا اور آنحضرت ﷺ کے وصال کے بعد اس نے نبوت کا جھوٹا دعویٰ کیا۔۔۔ اگرچہ ایسا دعویٰ کرنے والوں میں وہ اکیلا نہیں تھا ` لیکن اس کا نام کذاب یعنی جھوٹ سے منسوب ہوگیا۔۔۔ خلیفہ ءاول نے اس پر لشکر کشی کرکے اسے جہنم واصل کیا۔۔۔

جو شحص اللہ تعالیٰ کا نام بھی لیتا ہو اور یہ ظاہر کرتا ہو کہ وہ ایک متقی اور پرہیزگار مسلمان ہے اور پھر جھوٹ اس اعتماد کے ساتھ بولتا ہو جس اعتماد کے ساتھ مولانا فضل الرحمان اور میاں نوازشریف بولتے ہیں اس شخص کو آپ کیا کہیں گے ۔۔۔؟
جس قسم کے جھوٹ یہ لوگ بولتے ہیں اس قسم کے جھوٹ تبھی بولے جاسکتے ہیں جب آپ کے دل میں خدا کا خوف نہ ہو یا پھر آخرت پر آپ کا ایمان ہی نہ ہو۔۔۔
میں سمجھتا ہوں کہ جو کذاب دین کے پیچھے چھپتا ہو یا پھردین کا لبادہ اوڑھ کر جھوٹ بیچتا ہو اس سے بڑا جہنمی کوئی نہیں ہوسکتا ۔۔۔ ہم سب گنہگار ہیں۔۔۔ مگر جب تک گناہ کرتے وقت بھی ہمیں یہ احساس ہوتا یا رہتا ہو کہ ہم گناہ کررہے ہیں۔۔۔ہمارے لئے توبہ کے دروازے بند نہیں ہوتے۔۔۔ اور اللہ تعالیٰ کی بے پایاں رحمتیں ہم سے منہ نہیں موڑ تیں۔۔۔
میاں نوازشریف اور مولانا فضل الرحمان کے حامی یا پیروکار لاکھوں کی تعداد میں ہوں گے۔۔۔ جھوٹی نبوت کے دعویداروں کے بھی حامی او ر پیروکار ہوتے تھے اور ہیں۔۔۔ لیکن اس کا مطلب یہ نہیں کہ ” جھوٹ “ کو ہم معاشرے کی ایک سچائی کے طور پر تسلیم کرلیں۔۔۔؟
جھوٹی نبوت کے دعوے کرنا یا قوم کا رہبر بننے کے لئے جھوٹ بولنا میرے نزدیک ایک ہی بات ہے۔۔۔
اسی لئے میں نے گزشتہ روز ٹویٹ کیا ۔۔۔ ” نون لیگ کے کیمپ میں ایک طاقتور گروپ میاں صاحب کو یہ مشورہ دینے والا ہے کہ وہ نبوت کا اعلان کردیں کیوں کہ اب بچاﺅ کا کوئی اور راستہ ان کے سامنے نہیں ۔۔۔“ اس ٹویٹ کا خیال مجھے خواجہ سعد رفیق کا یہ نعرہ ءمستانہ سن کر آیا۔۔۔” ایک شریف کو نکالو گے تو ہم دوسرا شریف لے آئیں گے اور دوسرا شریف نکالو گے تو ہم تیسرا لے آئیں گے ۔۔۔“
ایسے ہی ” عقیدت مند “ ہوتے ہیں جو جھوٹ کا کاروبار کرنے والوں کو نبوت کا جھوٹا دعویٰ کرنے پر اکساتے ہیں۔۔۔
نعوذ باللہ۔۔۔
میں جانتا ہوں کہ میاں صاحب کے عقید ت مندوں کو میری یہ بات ناگوار گزری ہے۔۔۔ لیکن یہ بات ناگوار کیوں نہیں گزرتی کہ جس شخص کو قوم نے وزیراعظم بنایا اس نے اپنے ایمان سے خوفِ خدا کو نکال کر ” حبِ مال“ کو جگہ دے دی۔۔۔؟
نواز کیمپ سے پاکستان کی عدلیہ پاکستان کی فوج اور پاکستان کی اساس پر رکیک حملوں کا سلسلہ جاری ہے۔۔۔
اس کی تازہ ترین مثال آزاد کشمیر کے وزیراعظم فاروق حیدر کا شرمناک بیان ہے۔۔۔ یہ محض اتفاق نہیں کہ نون لیگ میں فاروق حیدر ` خواجہ سعد رفیق ` دانیال عزیز ` حنیف عباسی ` طلال چوہدری اور رانا ثناءاللہ جیسے لوگوں کا قد بڑا نظر آتا ہے۔۔۔ جھوٹے نبی اپنے اردگرد ایسے لوگوں کی موجودگی ہی پسند کرتے ہیں۔۔۔
ہمیں روایتِ حضرت ابوبکر ؓ زندہ کرنی ہوگی۔۔۔
کذابوں پر لشکر کشی وقت کی اہم ترین ضرورت ہے۔۔۔

Scroll To Top